ہمیں پاکستانی افرادی قوت کی ضرورت نہیں،طالبان

افغانستان کےنائب وزیراطلاعات ذبیح اللہ مجاہد نے وزیراعظم پاکستان عمران خان کی افرادی قوت افغانستان بھیجنے کی پیشکش رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمیں بیرونی افرادی قوت کی ضرورت نہیں ہے۔برطانوی نشریاتی ادارے کو انٹرویو میں ذبیح اللہ مجاہد نے افرادی قوت سے متعلق پاکستانی پیشکش کا شکریہ اداکیا اور کہاکہ افغانستان میں ماہر اور تعلیم یافتہ افرادکی کافی تعداد ہے لہٰذا ہمیں بیرونی افرادی قوت کی ضرورت نہیں۔انہوں نے کہا کہ ضرورت پڑنے پر بیرونی ممالک سے درخواست کرسکتے ہیں لیکن افغانستان تعلیم یافتہ نوجوانوں کے معاملے میں خودکفیل ہے۔ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا تھاکہ افرادی قوت کے حوالے سے کئی ممالک نے افغانستان کو تجاویز دی ہیں لیکن ہم اقتصادی، تجارتی اور مالیاتی شعبوں میں تعاون کو قبول کریں گے۔ان کا کہنا تھاکہ ملک میں بینکنگ کے کچھ مسائل ہیں جن میں مدد کی ضرورت ہے۔خیال رہے کہ گزشتہ دنوں وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت افغانستان پر اپیکس کمیٹی نے عزم کا اظہار کیا تھا کہ پاکستان ضرورت کی اس گھڑی میں افغان عوام کو تنہا نہیں چھوڑے گا۔ وزیراعظم نے کہا تھاکہ پاکستان افغان عوام کو ہر ممکن مدد فراہم کرنے کیلئے پرعزم ہے، افغانستان میں انسانی بحران کو روکنے کیلئے تعلیم یافتہ اور تربیت یافتہ افرادی قوت افغانستان بھیجی جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں