کراچی سمیت سندھ بھرمیں23 سے26 جولائی کےدرمیان طوفانی بارش کی پیشگوئی

محکمہ موسمیات نے جمعرات کو سندھ کے کئی اضلاع کے لیے ہفتہ (کل) سے اربن فلڈنگ کی وارننگ جاری کی ہے جمعہ کی رات سے صوبے میں مون سون کے نیا مضبوط سلسلہ صوبے میں داخل ہونے کا امکان ہے۔ یہ نظام 26 جولائی تک غالب رہنے کا امکان ہے، تیز ہواؤں کا سبب بن سکتا ہے جو کمزور ڈھانچوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔محکمہ موسمیات کی ایڈوائزری کے مطابق 23 سے 26 جولائی کے دوران تھرپارکر، عمرکوٹ، میرپورخاص، بدین، ٹھٹھہ، ٹنڈو محمد خان، ٹنڈو الہ یار، حیدرآباد، مٹیاری، سانگھڑ، نواب شاہ، خیرپور، سکھر، لاڑکانہ، جیکب آباد، دادو، جامشورو، شکارپور، قمبر شہدادکوٹ، گھوٹکی اور کشمور کے اضلاع میں موسمی نظام کے باعث تیز ہواؤں، آندھی اور گرج چمک کے ساتھ بارش کا امکان ہے۔ ایڈوائزری میں کہا گیا ہے کہ 24 جولائی سے 26 جولائی کے درمیان کراچی میں تیز/گرج چمک کے ساتھ بارش اور طوفانی بارش کا امکان ہے، زبردست/بہت زیادہ بارش سے کراچی کے نشیبی علاقوں میں شہری سیلاب/پانی جمع ہو سکتا ہے۔پیش گوئی کی مدت کے دوران حیدرآباد، مٹیاری، ٹھٹھہ، بدین، میرپورخاص، عمرکوٹ، تھرپارکر، ٹنڈو محمد خان، ٹنڈو الہ یار، سانگھڑ، نواب شاہ، دادو، جامشورو، قمبر شہدادکوٹ، لاڑکانہ اور سکھر کے لیے شہری سیلاب کی وارننگ بھی جاری کی گئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ تمام متعلقہ حکام سے درخواست کی جاتی ہے کہ وہ پیشن گوئی کی مدت کے دوران چوکس رہیں اور ضروری اقدامات کریں۔اس حوالے سے مزید کہا گیا کہ خضدار، لسبیلہ اور حب میں کیرتھر رینج کے ساتھ مسلسل شدید طوفان کی وجہ سے پہلے سے بھرے ہوئے حب ڈیم میں مزید پانی کی آمد ہو سکتی ہے جبکہ دادو اور جامشورو اضلاع اور نشیبی علاقوں میں سیلابی ریلے کی آمد کے امکان کو مسترد نہیں کیا جا سکتا

اپنا تبصرہ بھیجیں