عمرسرفراز چیمہ کی درخواست پراعتراض ختم،لارجر بنچ تشکیل دینےکی ہدایت

سابق گورنرعمرسرفراز چیمہ کی درخواست پر اعتراض ختم کرکے چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے گورنر عہدے سے برطرفی درخواست پر لارجر بنچ تشکیل دینے کی ہدایت کردی، چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے ریمارکس دیئے کہ یہ ڈیموکریٹک فارم آف گورنمنٹ ہے، صدارتی طرزحکومت نہیں۔ جمعہ کو چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ اطہرمن اللہ نے عمرسرفرازچیمہ کی گورنرعہدے سے برطرفی کیخلاف درخواست پرسماعت کی، عمرسرفرازچیمہ اپنے وکیل بابر اعوان کے ساتھ عدالت پیش ہوئے، بابراعوان نے موقف اپنایا کہ درخواست میں دو اعتراضات واٹس ایپ کاپی اوردائرہ اختیارپراعتراض اٹھایا گیا۔چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے ریمارکس دیے کہ یہ وفاقی حکومت کی جاری کردہ نوٹیفکیشن ہے جب بابراعوان آپ وزیرقانون تھے اس وقت صدرکے اختیارات کےبارے میں طے ہوگیا تھا، وکیل نے کہا کہ صدرکے اختیارات آرٹیکل 101کوبالکل نہیں چھیڑا گیا جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے یہ ڈیموکریٹک فارم آف گورنمنٹ ہے،صدارتی طرزحکومت نہیں۔ میڈیا سے گفتگومیں سابق گورنر نے تمام غیر آئینی اقدامات کو کالعدم قراردینے کی استدعا کی، عدالت نے درخواست پراعتراضات ختم کرتے ہوئے لارجر بینچ تشکیل دینے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 24مئی تک کیلئے ملتوی کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں