عمران خان پرحملےکےخلاف پی ٹی آئی سپریم کورٹ پہنچ گئی، جوڈیشل کمیشن بنانےکی استدعا

پاکستان تحریک انصاف نے عمران خان پر حملے کی ایف آئی آر کے اندراج کے لیے سپریم کورٹ لاہور، پشاور اور کوئٹہ رجسٹری میں درخواست دائر کر دی ہے۔شاہ محمود قریشی، عثمان بزدار، شفقت محمود اور دیگر اراکین کی جانب سے دائر درخواست میں عمران خان پر حملے کی ایف آئی آر کے اندراج، اعظم سواتی کی مبینہ ویڈیو اور ارشد شریف کے قتل کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے۔لاہور میں درخواست رجسٹرار سپریم کورٹ اعجاز گورایہ کو جمع کرائی گئی، درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا کہ عمران خان پر قاتلانہ حملے کی ایف آئی آر ہماری درخواست کے مطابق درج کی جائے، سپریم کورٹ اعظم سواتی اور ارشد شریف کے معاملے کو بھی دیکھے۔ درخواست میں مزید کہا گیا کہ تحریک انصاف کے رہنماؤں نے جوڈیشل کمیشن بنانے کی درخواست دائر کی ہے، سپریم کورٹ ان معاملات پر سوموٹو نوٹس لے کر کارروائی کرے۔بعدازاں لاہور میں سپریم کورٹ رجسٹری کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم نے عمران خان پر قاتلانہ حملے، ارشد شریف کے قتل اور اعظم سواتی کی نجی ویڈیو لیک کے معاملے پر تحقیقات کے لیے چیف جسٹس سے جوڈیشل کمیشن تشکیل دینے کی درخواست کی ہے۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ لاہور کی سپریم کورٹ رجسٹری میں عثمان بزدار کی جانب سے پٹیشن جمع کروائی گئی ہے، اسی طرح اسلام آباد، کراچی، کوئٹہ اور پشاور میں بھی درخواستیں جمع کروائی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ تینوں معاملات پر توجہ دی جائے، عمران خان پرقاتلانہ حملے کےحقائق قوم کےسامنے آنے چاہئیں، عوام حقائق جاننا چاہتے ہیں، ہم نے رجسٹرار کے سامنے اپنی پٹیشن جمع کروادی ہے، ہماری خواہش ہے کہ چیف جسٹس پہلی فرصت میں اس پر کارروائی اور حکم فرمائیں گے۔ شاہ محمود قریشی کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ 3 بنیادی معاملات پر سپریم کورٹ نوٹس لے، عمران خان پر قاتلانہ حملے کی ایف آئی آر درج نہیں ہورہی، اعظم سواتی اور ارشد شریف کے معاملے پر بھی نوٹس لیا جائے۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے ادارے کا اتنا کمزور نہ کردیں کہ لوگ اس کی جانب دیکھنا ہی چھوڑ دیں، اس وقت پاکستان میں لوگوں کا اداروں اور عدالتوں پر اعتبار بہت کم ہوگیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں