سترفیصد ڈینگی کےکیسزآرہےہیں لیکن حکومت صرف5 فیصد بتارہی ہے,ڈاکٹرطارق محمود

ملک میں رواں سال 70 سے 80 فیصد مریض ڈینگی کے آرہے ہیں لیکن حکومت صرف 5 فیصد رپورٹ کر رہی ہے۔یہ بات پاکستان اکیڈمی آف فیملی فزیشنز کے زیر اہتمام ایک تقریب میں خطاب کرتے ہوئے اکیڈمی کے صدر ڈاکٹر طارق محمود نے کہی انہوں نے شرکاء کو بتایا کہ پاکستان کا پرائمری ہیلتھ سسٹم، ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق نہیں ہے اس لیےعلاج کسی بھی طرح بہتر نہیں ہوسکتا۔ڈاکٹر طارق محمود نے اپنے خطاب میں کہا کہ پرائمری سطح پرہاؤس جاب کرنے والے ڈاکٹرز کو بھی ٹریننگ نہیں دی جاتی جس کے باعث اسپتالوں کی او پی ڈی میں مریضوں کا رش لگا رہتا ہے۔انہوں نے کہا کہ اب مریضوں کی ہسٹری کے بجائے صرف ٹیسٹوں پر مہنگا علاج کیا جا رہا ہے۔انہوں نے دعویٰ کیا کہ رواں سال ڈینگی کے شکار مریضوں کے 70 سے 80 فیصد کیسز آرہے ہیں لیکن حکومت صرف 5 فیصد مریضوں کے کیس رپورٹ کر رہی ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں