رانا ثناءکیخلاف توہین عدالت کی درخواست:جرم ہونےسےپہلے فرض نہیں کرسکتے،سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے وزیرداخلہ رانا ثنا اللہ کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کی درخواست پر سماعت غیرمعینہ مدت تک ملتوی کرتے ہوئے مزید شواہد عدالتی ریکارڈ پر لانے کا حکم دے دیا۔جسٹس اعجاز الاحسن نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ اگر ریاستی مشینری کی جانب سے بندے اٹھائے جائیں تو یہ فوجداری جرم ہوگا اور توہین بھی اس وقت ہی ہوگی، کسی جرم کو ہونے سے پہلے فرض نہیں کرسکتے۔سپریم کورٹ میں آج رانا ثنا اللہ کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر سماعت جسٹس اعجازالاحسن کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے کی۔ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے وکیل فیصل چوہدری نے رانا ثنا اللہ کے بیان کے ٹرانسکرپٹ پر دلائل دیتے ہوئے کہا کہ رانا ثنا اللہ نے ہمارے بندے اِدھر اُدھر کرنے کا بیان دیا، ہمارے رکن اسمبلی مسعود مجید کو 40 کروڑ میں خرید کر ترکی اسمگل کردیا گیا۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) سے تعلق رکھنے والی راحیلہ نامی خاتون نے ہمارے 3 ارکان اسمبلی سے رابطہ کیا، عطا تارڑ نے بھی ہمارے 3 ارکان اسمبلی کو 25 کروڑ کی آفر کی۔جسٹس منیب اختر نے استفسار کیا کہ آپ کے رکن اسمبلی کے ساتھ راحیلہ کی بات کس تاریخ کو ہوئی؟ اصل بیان حلفیہ کہاں ہے؟ اس پر فیصل چوہدری نے جواب دیا کہ اصل بیان حلفی لاہور میں ہے۔جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیے کہ ’آئی ایم سوری، اس کا مطلب ہے آپ کو بھی علم نہیں، تینوں بیان حلفی پر عبارت ایک جیسی ہے جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ہمارے یکم جولائی کے حکم کی کیا خلاف ورزی ہوئی، عطا تارڑ اور راحیلہ کے خلاف آپ کی توہین عدالت کی درخواست نہیں۔فیصل چوہدری نے عدالت سے راحیلہ اور عطا تارڑ کے خلاف سوموٹو لینے کی استدعا کی تو جسٹس منیب اختر نے کہا سوموٹو لینا چیف جسٹس کا اختیار ہے۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اگرریاستی مشینری کی جانب سے بندے اٹھائے جائیں تو یہ فوجداری جرم ہوگا اور توہین بھی اس وقت ہی ہوگی، کسی جرم کو ہونے سے پہلے فرض نہیں کرسکتے۔بعد ازاں سپریم کورٹ نے پرویز الٰہی کے وکیل کو توہین عدالت سے متعلق مزید شواہد ریکارڈ پر لانے کی ہدایت کردی جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیے کہ توہین عدالت کا جو الزام لگایا ہے اس کو ثابت کریں تاکہ پتا چلے عدالتی حکم کی خلاف ورزی ہوئی یا نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم یہاں پر بیٹھے ہیں اور ہماری آنکھیں بند نہیں، ہماری نظر اپنے حکم نامے اور قانون پر ہے۔ فیصل چوہدری نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے ارکان اسمبلی کی کامیابی کا نوٹی فکیشن نہیں جاری کیا، الیکشن کمیشن سے ہمارے حالات کشیدہ ہیں۔جٹس اعجاز الاحسن نے رہمارکس دیے کہ آپ کے حالات الیکشن کمیشن سے کشیدہ ہوں گے مگر ہمارے ساتھ تو نہیں۔ بعد ازاں عدالت نے رانا ثنا اللہ کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر سماعت غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردی۔ واضح رہے کہ 2 روز قبل اسپیکر پنجاب اسمبلی اور تحریک انصاف کے وزیراعلیٰ پنجاب کے حمایت یافتہ امیدوار پرویز الہٰی نے وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنااللہ، وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز اور وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب کے خلاف سپریم کورٹ میں توہین عدالت کی درخواست دائر کی تھی۔ سینئر وکیل فیصل فرید کے توسط سے دائر درخواست میں پرویز الہٰی نے سپریم کورٹ پر زور دیا تھا کہ وہ حمزہ شریف، رانا ثنا اللہ اور مریم اورنگزیب کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کرے کیونکہ انہوں نے مبینہ طور پر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے اراکین اسمبلی کو آئندہ وزیر اعلیٰ کے انتخاب سے قبل غائب کرنے کی دھمکی دی۔ پرویز الہی نے جواب دہندگان پر الزام عائد کیا تھا کہ انہوں نے 22 جولائی کو وزیر اعلیٰ پنجاب کے عہدے کے لیے ‘رن آف پولز’ کے انعقاد کے لیے سپریم کورٹ کے یکم جولائی کے حکم کی خلاف ورزی کی۔ درخواست گزار نے سپریم کورٹ سے استدعا کی تھی کہ وہ مبینہ توہین کرنے والے افراد کو طلب کرے اور عدالتی ہدایات کی خلاف ورزی کرنے پر انہیں سزا دی جائے۔ گزشتہ روز سپریم کورٹ میں توہین عدالت کی سماعت کے دوران پرویز الہٰی کے وکیل نے مؤقف اختیار کیا تھا کہ پریس کانفرنس اور ٹاک شو کے ذریعے پی ٹی آئی اراکین صوبائی اسمبلی کو دھمکایا گیا۔ بعد ازاں عدالت نے درخواست گزار کو ہدایت دی تھی کہ پریس کانفرنس، ٹاک شو کا مکمل ٹرانسکرپٹ فراہم کریں، جیسے ہی مکمل ٹرانسکرپٹ فراہم کیا جاتا ہے مقدمہ فوری طور پر سماعت کے لیے مقرر کر دیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں