جو کہا سچ ہے،جسٹس وجیہ بیان پرقائم

وزیراعظم عمران خان پر لگائے گئے الزامات کے حوالے سےجسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین نے کہا ہے کہ میں نے جو بھی کہا وہ سچ ہے اور اگر کوئی ہتک عزت کا مقدمہ کرنا چاہتا ہے تو ضرور کرے۔کراچی میں ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما خالد مقبول صدیقی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین نے کہا کہ پاکستان میں ہم سب کے مشترکہ مسائل ہیں، کہیں وڈیرہ اور سردار قابض ہے تو کہیں خان قابض ہے، اگر قابض کوئی نہیں ہے تو پاکستان کے عوام قابض نہیں ہیں اور اسی عوام کے لیے ہم جدوجہد کررہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ سب سے بڑا مسئلہ شہری آبادی کا ہے اور ان مسائل میں بھی سندھ سب سے پیچھے ہے، پہلے کراچی اور سندھ کی باتیں ہوتی تھیں لیکن اب شہری اور دیہی سندھ کی باتیں شروع ہو گئی ہیں جس کے لیے اسمبلی کے مقدس فلور کا استعمال کیا جا رہا ہے۔فواد چوہدری کی جانب سے ہتک عزت کے مقدمہ دائر کرنے کے حوالے سے سوال پر جسٹس وجیہہ الدین نے کہا کہ میں نے جو کچھ بھی کہا ہے وہ سچ ہے، اگر کوئی صاحب ہتک عزت کا مقدمہ کرنا چاہتے ہیں تو ضرور کریں، عدالتیں کھلی ہوئی ہیں، قانون کی عملداری کا تو مطلب ہی یہی ہے کہ اگر کسی کے حقوق کی پامالی ہوئی ہے تو وہ عدالتوں میں جائے۔ان کا کہنا تھا کہ سوال یہ ہے کہ حقوق کی پامالی فواد چوہدری کی ہوئی ہے یا عمران خان کی ہوئی ہے، اگر ہتک عزت کا مقدمہ بالخصوص کریمنل مقدمہ دائر کرنا ہے تو ایف آئی آر کون کٹواتا ہے، وہ شخص جس کے گھر پر واردات ہوئی ہو یا کوئی راہ چلتا آدمی ایف آئی آر کٹوائے گا۔انہوں نے کہا کہ جہاں تک جہانگیر ترین کی جانب سے تردید کی بات ہے تو وہ آخر کرتے بھی کیا، کیا وہ کہتے کہ میں اخراجات کرتا رہا ہوں، اس طرح کے اخراجات کی کوئی دستاویزی شکل نہیں ہوتی لہٰذا ان کے لیے اس کی تردید کرنا بہت آسان تھا۔جسٹس وجیہہ الدین نے کہا کہ چینی کے بارے میں جو مسئلہ کھڑا ہوا تھا جس پر کمیشن وغیرہ تک بات گئی تھی تو اس میں جہانگیر ترین کا کونسا بال بیکا ہو گیا اور اس بحران کے نتیجے میں تو آپ نے اربوں روپے کما لیے، تو آپ کے تعلقات کونسے کشیدہ ہوئے، آپ کو تو فائدہ ہی ہوا۔واضح رہے کہ یہ معاملہ اس وقت شروع ہوا تھا جب تحریک انصاف کے سابق رہنما اور جسٹس ریٹائرڈ وجیہہ الدین نے عمران خان کے اخراجات کے حوالے سے سنگین الزامات عائد کیے تھے۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے جسٹس ریٹائرڈ وجیہہ الدین نے کہا تھا کہ یہ مت سمجھیں کہ عمران خان دیانتدار آدمی ہیں، جہانگیر ترین پہلے عمران خان صاحب کے گھریلو اخراجات کیلئے 30 لاکھ روپے ماہانہ دیا کرتے تھے، بعد میں خرچ کے لئے یہ رقم بڑھا کر 50 لاکھ روپے کر دی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں