بنگلہ دیشی گاؤں میں موجود اسپتال دنیا کی ‘نئی بہترین عمارت’ قرار

بنگلہ دیش کے ایک دور دراز کے گاؤں میں موجود ہسپتال کو دنیا کی ‘نئی بہترین عمارت’ قرار دیا گیا ہے۔ بنگلہ دیش کے جنوب مغربی ضلع ساتخیرا کے گاؤں شیام نگر میں واقع فرینڈ شپ ہاسپٹل کو یہ اعزاز رائل انسٹیٹوٹ آف برٹش آرکیٹیکٹ (آر آئی بی اے) نے دیا۔بنگلہ دیش کا یہ علاقہ سمندری سطح میں اضافے اور اکثر سیلاب کے خطرات سے دوچار ہے۔ 80 بستروں کے ہسپتال کو مقامی طور پر تیار کردہ اینٹوں کی مدد سے تیار کیا گیا۔ پراجیکٹ کے چیف آرکیٹیکٹ کاشف چوہدری نے بتایا کہ ‘ہم نے مقامی میٹریل اور معماروں کو استعمال کیا، ہمیں یقین ہے کہ ہسپتال کے ارگرد کے دیہات کے رہائشی اس مقام کو قبول کریں گے اور اپنے علاج کے لیے وہاں آئیں گے’۔ پورے ہسپتال کے گرد ایک نہر موجود ہے جو وہاں کے مختلف سیکشنز کو الگ کرنے کا کام بھی کرتی ہے۔ کاشف چوہدری نے بتایا کہ یہ نہر ٹھنڈک فراہم کرنے کا کام کرے گی جس سے ایئر کنڈیشننگ کے استعمال سے گریز اور بجلی کی بچت میں مدد ملے گی’۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم نے متعدد راہداریاں، باغات، پولز، درختوں، سبزہ ہسپتال کا حصہ بنایا ہے جو سورج کی روشنی اور ہوا کے تمام جگہوں پر پہنچاتے ہیں۔ آرکیٹیکٹس کا کہنا تھا کہ موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات کو مدنظر رکھتے ہوئے ہسپتال کا ڈیزائن تیار کیا گیا۔ ہسپتال کو دنیا کی بہترین عمارت کا اعزاز ملنے پر مقامی افراد نے خوشی کا اظہار کیا اور ان کا کہنا تھا کہ ہم نے کبھی اس طرح کا ہسپتال نہیں دیکھا، جو فطرت کا حصہ محسوس ہوتا ہے اور وہاں کچھ بھی مصنوعی استعمال نہیں ہوا، یہاں تک کہ اینٹیں بھی قدرتی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں