الیکشن کمیشن کا فیصلہ کےسنجیدہ نتائج ہوسکتے ہیں،عرفان قادر

سابق اٹارنی جنرل عرفان قادر نے کہا ہےکہ اب مشاورت کے ساتھ قوانین بنائیں اور ایسے قوانین نہ ہوں جس کے تحت یہ ملک چل ہی نہ سکے۔عرفان قادر نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے فیصلے کے سنجیدہ نتائج ہوسکتے ہیں، قوانین کو مل جل کر ٹھیک نہیں کریں گے تو نہ مستحکم حکومت اور نہ اپوزیشن بنے گی۔انہوں نے کہا کہ عمران خان کے لیے موقع اچھا تھا کہ اپوزیشن میں بیٹھ جاتے اور قانون سازی کرلیتے مگر ان کا خیال تھا کہ یہ پورے ملک پر اپنی حکومت بنالیں گے اور دو تہائی اکثریت لے لیں گے۔سابق اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ یہ سیاسی قیادت کے لیے لمحہ فکریہ ہے، اب مشاورت کے ساتھ قوانین بنائیں، ایسے قوانین نہ ہوں جس کے تحت یہ ملک چل ہی نہ سکے ، یا تو سب این آر او کی طرف جائیں یا سب اپنا نقصان کریں۔دوسری جانب ماہر قانون سابق اٹارنی جنرل اور پیپلزپارٹی کے رہنما لطیف کھوسہ کا کہنا تھا کہ آئین اورقانون کی بالادستی ہونی چاہیے، عمران خان بیانیہ بنانے کے ماہر ہیں۔انہوں نے کہا کہ نوازشریف نے بیٹوں کی فرم سے تنخواہ نہیں لی تو وہ تاحیات نااہل ہوگئے، پی ٹی آئی نے تو غیرملکیوں سے فنڈنگ لی، ممنوعہ فنڈنگ کی رقم ضبط ہوجائے گی

اپنا تبصرہ بھیجیں