اجنبی افرادکودل یابوسےوالا ایموجی بھیجنےپر46 لاکھ روپےجرمانہ،5 سال قید ہوگی

سعودی عرب میں انسداد ہراسانی قانون کے تحت مختلف ایموجیز کو ہراساں کرنے باعث قرار دیا گیا۔ دل یا بوسے والے ایموجیز اجنبی افراد کو مسیجنگ ایپس جیسے واٹس ایپ پر بھیجنا جیل یا جرمانے جیسی سزاؤں کا باعث بن سکتا ہے۔سعودی عرب کے انسداد فراڈ ایسوسی ایشن کے رکن المواتز قطبی نے بتایا کہ ان ایموجیز کو بھیجنے والا اگر مجرم قرار پایا تو اسے 2 سے 5 سال قید اور ایک لاکھ سعودی ریال (تقریباً 46 لاکھ روپے) جرمانے کی سزائیں اکٹھی سنائی جاسکتی ہیں۔انہوں نے بتایا کہ واٹس ایپ پر دل کے ایموجی کو بھیجنا ہراساں کرنے کے جرم میں شامل ہے اور آن لائن چیٹس کے دوران کچھ تصاویر اور تاثرات کا استعمال بھی متاثرہ فریق کی شکایت کرنے پر ہراساں کرنے کے جرم میں بدل سکتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں